‏فن لینڈ کی وزیر اعظم سنا مارین نے انتخابات میں دائیں بازو کی جماعت کی جیت کا اعتراف کر لیا‏

‏فن لینڈ کی وزیر اعظم سنا مارین نے انتخابات میں دائیں بازو کی جماعت کی جیت کا اعتراف کر لیا‏

‏فن لینڈ کی پارٹی سے محبت کرنے والی وزیر اعظم سنا مارین‏‏ نے اتوار کے روز ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں حزب اختلاف کی دائیں بازو کی نیشنل کولیشن پارٹی کے ہاتھوں شکست کا اعتراف کیا ہے۔‏

‏توقع کی جارہی تھی کہ این سی پی پارلیمنٹ کی 48 میں سے 200 نشستیں حاصل کرے گی اور 46 نشستوں کے ساتھ قوم پرست فنس پارٹی سے آگے ہے۔‏

Advertisement

‏وزارت انصاف کے انتخابی اعداد و شمار کے مطابق مارین کی سوشل ڈیموکریٹس نے 43 نشستیں حاصل کیں۔‏

‏این سی پی رہنما پیٹری اورپو نے فن لینڈ اور اس کی معیشت کو ٹھیک کرنے کے عزم کا اظہار کرتے ہوئے ایک تقریر میں کہا، “ہمیں سب سے بڑا مینڈیٹ ملا ہے۔‏

Advertisement

‏انہیں پارلیمنٹ میں اکثریت حاصل کرنے کے لئے اتحاد بنانے کا پہلا موقع ملے گا کیونکہ مارین کا دور ختم ہونے کی توقع ہے۔‏

‏37 سالہ مارین نے اپنے حامیوں کو بتایا کہ ‘ہم نے حمایت حاصل کی ہے، ہم نے (پارلیمنٹ میں) زیادہ نشستیں حاصل کی ہیں۔ “یہ ایک عمدہ کامیابی ہے، بھلے ہی ہم آج پہلے نمبر پر نہ آ سکے۔‏

Advertisement

‏2019 میں عہدہ سنبھالنے کے بعد دنیا کی کم عمر ترین وزیر اعظم ‏‏مارین‏‏ کو اپنی پارٹی اور اپنی حکومت کے بڑے اخراجات کی وجہ سے تنقید کا سامنا کرنا پڑا ہے۔‏

‏وہ بہت سے فنوں، خاص طور پر نوجوان اعتدال پسندوں میں مقبول رہیں، اور انہیں دنیا بھر میں نئے ترقی پسند رہنماؤں کے ہزار سالہ رول ماڈل کے طور پر دیکھا جاتا تھا۔‏

Advertisement

‏انہیں کچھ قدامت پسندوں کی جانب سے تنقید کا سامنا کرنا پڑا حالانکہ انہوں نے پنشن اور تعلیم پر جس طرح سے خرچ کیا اس کے بارے میں ان کا کہنا تھا کہ یہ کافی کفایت شعاری نہیں تھی۔‏

‏این سی پی نے پچھلے دو سالوں سے انتخابات میں سبقت حاصل کی لیکن حالیہ مہینوں میں اس کی برتری سکڑ گئی۔‏

Advertisement

‏اس میں کم اخراجات اور عوامی قرضوں میں اضافے کو روکنے کا مطالبہ کیا گیا تھا جو مارین نے اپنی مدت کے آغاز کے بعد سے جی ڈی پی کے صرف 70 فیصد تک پہنچ گیا تھا۔‏

‏اورپو نے مارین کو فن لینڈ کی اقتصادی لچک کو ختم کرنے کے لئے تنقید کا نشانہ بنایا کیونکہ یوکرین پر روس کے حملے کے بعد یورپ کو توانائی کے بحران کا سامنا ہے۔‏

Advertisement

‏مارین کی خارجہ پالیسی کے مقاصد میں سے ایک ان کا اصرار رہا ہے کہ روس کے اقدامات کے بعد ملک نیٹو کی رکنیت حاصل کرے۔‏

‏یہ عمل تقریبا مکمل ہو چکا ہے اور توقع ہے کہ نیٹو ارکان کی منظوری کے چند دنوں کے اندر اندر ملک اس میں شامل ہو جائے گا۔ ‏

Advertisement
Advertisement

Leave a Comment